Instagram

Friday, 20 July 2018

Tajushshariha K Wisal Par

وارثِ علومِ رضا حضور تاج الشریعہ نور اللّٰہ مرقدہٗ کے وصالِ پُر ملال پر آہوں اور سسکیوں سے لبریز کربیہ نذرانۂ عقیدت
از قلم سراپا درد: ڈاکٹر محمد حسین مشاہد رضوی
دلوں پہ بجلیاں گری
نشانِ کیف مٹ گیا
قلم لرز لرز اٹھا
نہیں ہے تابِ گفتگو
حروف سب بکھر گئے
معانی بے نمو ہوئے
نہیں ہے کچھ بھی تاب اب
نگاہ و دل ہیں غم زدہ
میں کیسے اور کیا لکھوں
بہت سِوا ہے درد آج
وہ سنیت کے باغ کا
فہیم باغباں اٹھا
چراغِ ضَو فشاں اٹھا 
سروں سے سائباں اٹھا
ہمارا پاسباں اٹھا
رضا کے علم و فضل کا
عظیم رازداں اٹھا
چراغِ حُسنِ معرفت
چراغِ شانِ حنفیت
چراغِ نورِ سنیّت
چراغِ فیضِ رضویت
چراغِ فضلِ نوریت
چراغِ رمزِ شعریت
چراغِ بزمِ حریت
وہ مرکزِ عقیدتاں
وہ مصدرِ حقیقتاں
وہ محورِ یقیں مرا
وہ مجھ پہ فضلِ کبریا
وہ مجھ پہ لطفِ مصطفیٰ
معین و غوث کی عطا
وہ برکتوں کا سلسلہ
مرے رضا کی روح سے
ملی تھی جس کو تربیت
وہ اک جہانِ علم و فن
وہ بے مثال شخصیت
وہ جس کے دم سے تھی رواں
رضا کی علمی سلطنت
وہ نورِ جاں وہ مہرباں
وہ میرے واسطے اماں
وہ ایک عارفِ تواں
وہ عازمِ سوئے جناں
چراغِ سنیت بجھا
الٰہی رات آگئی
مُشاہدِ غریب کو
تُو ظلمتوں سے اب بچا
٭--٭٭--٭

Image may contain: text